Archive for the ‘Disaster’ Category

بھیک دو

پتا نہیں وہ کیا کہ رہے تھے مگر مجھے ایسا لگ رہا تھا کے وہ سب مل کر "بھیک دو” "بھیک دو” کے نعرے لگا رہے ہیں۔ ورلڈ بنک کے دفتر کے باہر چالیس پچاس لوگ دو تین بینر اٹھائے نعرے لگا رہے تھے۔ شائد ان کے علاقے میں امداد نہیں پہنچی تھی جس پر وہ سب لوگ اسلام آباد میں واقع دفتر کے سامنے شور مچا رہے تھے. تھوڑا آگے جا کر مجھے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کا دفتر نظر آیا تو میں یہ سوچنے پر مجبور ہو گیا کے ہم پاکستانی کس راستے پر چل پڑے ہیں ۔ پوری عوام کو بھیک مانگنے پر لگا دیا ہے۔ کہیں انکم سپورٹ ، کہیں وسیلہ روزگار ، کہیں بیت المال ، کہیں وطن کارڈ ۔۔۔۔۔۔۔ ہر جگہ قطاریں لگی ہوئی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ کیا یہ ہماری حکومتوں میں سیاسی و سماجی شعور کی کمی ہے یا صرف اپنوں کو نوازنے والی پالیسی ہے ۔ ہمارے ملک سے ابھی ایک سیلابی ریلا گزرا ہے ،بلاشبہ بے تحاشا تباہی اور املاک کو نقصان پہنچا لیکن خدارا!  اب عوام کو واپس کاموں پر لگاو، اکثر ابھی تک کمپس میں بیٹھے امداد کے متظر ہیں۔ کہتے ہیں سیلاب کے بعد زمینیں زرخیز ہوجاتی ہیں ؟ تو اس سال ہماری میگا فصلیں ہونی چاہیے ۔ حکومت نے ابھی تک اس جانب کوئی قدم نہیں اٹھایا۔ محنت کشوں کو محنت کش ہی رہنے دیں ، بھکاری نہ بنائیں۔ ان کو واپس آباد کرنے میں ان کو مدد کی جائے تو بہتر نہ ہوگا؟ اچھے بیج فراہم کے جایئں ، زرعی قرضے آسان شرائط پر مہیا کریں ، کچھ رہنمائی تو کریں ۔۔۔۔۔۔۔ نہیں!!! سب کے ہاتھوں میں کشکول دے دیا ہے ۔ زمینداروں کو کھیتی باڑی کے لئے لوگ نہیں مل رہے ، کون کام کرے ؟ سب کے گھروں میں امدادی اشیا کا ڈھیر لگا ہے۔ وہ ختم ہوگا تو کام شروع ہوگا۔

Advertisements

مشکلات کا سیلاب

کیا ہم واقعی بےحس ہو چکے ہیں؟ ٢٠٠٥ میں بھی تو ہم ہی تھے نہ ؟ اس وقت ہم کیسے ایک ہو گئے تھے ؟ اس وقت تو امدادی سامان کے ڈھیر لگ گئے تھے ۔ اتنا سامان ہو گیا تھا کے سبھالنا مشکل ہو گیا تھا۔ آج کیا ہوا؟ اس کی وجہ یہ تو نہیں کہ میرے ملک میں کہیں نہ کہیں کوئی نہ کوئی مسئلا درپیش ہے۔ بیرونی طاقتوں نے ہم کو اتنا مصروف کر دیا ہے کہ اب ہم کو دائیں بائیں دیکھنے کی فرصت ہی نہیں رہی ۔ کچھ دن پہلے ایک ایسی ہی ویب سائٹ پر پاکستان کے مستقبل کے بارے میں پڑھتے ہوئے مجھے جھرجھری آگئی۔ یہ ویب سائٹ ملاحظہ کریں۔ ایک کے بعد ایک مسئلہ ، ہم پر ہی کچھ برا وقت ہے ۔ اس پر کسی نے اچھا کہا کہ

الله  ہم سے   ناراض ہے یہ قرآن نے  بتا  دیا
مرے وطن کی حالت نے بادلوں کو بھی رلا دیا
ہواؤں  کی  ناراضگی  کا تب  علم ہوا   ہم    کو
جب   کسی  پرواز  کو  اس نے زمیں پر گرا دیا
یوں   خون کو  بہتا دیکھ کر  دریا سے رہا  نہ گیا
اک آنسوؤں کا سیلاب گلیوں تک میں بہا دیا
یہ پاک     زمین     رو رو      کر یہ کہتی       ہے
ایسے گناہگار لوگوں کو یا رب کیوں مجھ پر بسا دیا

جس ملک کے حکمران اس کٹھن وقت میں اپنی ذاتی مصروفیات ترک نہ کر سکیں تو اس ملک کے عوام بھی یقینا ایک دوسرے کا دکھ درد نہیں بانٹ سکیں گے ۔ ایسے میں ان کو جوتے ہی پڑنے چاہے۔ جب پاکستان کے اپنی عوام کو ان پر یقین نہ ہو تو دوسرے ملک کے لوگ کس طرح ان کا ساتھ دیں گے۔ شائد جن سرکاری دفاتر میں ایک یا دو دن کی تنخواہ زبردستی کاٹی گئی ہے وہ ہی روپے سرکاری مد میں جمع ہوے ہوں گے ورنہ کس نے ان کو پیسے دیے ہوں گے؟ جن لوگوں نے واقعی مدد کرنی تھی وہ یا تو خود براہ راست مدد کر رہے ہیں یا پھر کسی ایسے ادارے کے ذریعے مدد کر رہے ہیں جس پر ان کو بھروسہ ہے ۔ الله تعالی بھی تو امتحان لیتا ہے ، کہاں دریا خشک تھے اب بھرے تو ایسے کے سنبھالنا مشکل ہو گیا۔ خدا کی قدرت! !
صحرا تو بوند کو بھی ترستا دکھائی دے
بادل  سمندروں پہ برستا   دکھائی دے
درخواست  صرف اتنی ہے کے ان سیلاب زدگان کی مدد ضرور کریں چاہے کسی ذریعے سے کریں ۔ ان کو ہماری ضرورت ہے

سزا

بھارتی ریاست مدھیہ پردیش کے دارالحکومت بھوپال میں زہریلی گیس کے اخراج سے ہزاروں افراد کی ہلاکت کے الزام میں آٹھ ملزمان کو دو دو برس کی جیل کی سزا سنائی گئی ہے۔یہ تھی وہ شہ سرخی جس سے مجھے احساس ہوا کہ غریب چاہے پاکستان کا ہو یا دنیا کے کسی ملک کا، اس کی کہیں شنوائی نہیں ہے۔ ان ہزاروں لوگوں کے دکھوں پر کون مرہم رکھے گا جو اس حادثے کی وجہ سے معذوری کا شکار ہو گئے؟